Breaking News
Home / بلاگ / کورونا وائرس وبائی مرض کے جاری پھیلاؤ پر حقیقت پر منبنی ایک جائزہ

کورونا وائرس وبائی مرض کے جاری پھیلاؤ پر حقیقت پر منبنی ایک جائزہ

کورونا وائرس وبائی مرض کے جاری پھیلاؤ پر حقیقت پر منبنی ایک جائزہ

تحریر

مظفر جنگ

ریاست ہائے متحدہ امریکہ اور پورے یورپ ، ایشیاء اور لاطینی امریکہ میں حکمران طبقوں نے اپنے وسیع تر مفاد میں یہ بات ٹھان لی ہے کہ وہ کرونا وائرس کی روک تھام کے لیے معاشرتی فاصلوں اور غیر ضروری پیداوار کی بندش کو تسلیم نہیں کریں گے اور جس کا واضح نتیجہ یہ ہو گا کہ جلد ہی یہ وائرس مکمل دنیا کو اپنی لپیٹ میں لے لے گا.

400،000 سے زیادہ مرد ، خواتین اور بچے اپنی جانیں گنوا چکے ہیں اور کم از کم 7.1 ملین افراد اس وائرس سے متاثر ہو چکے ہیں۔ کیسوں کی تعداد میں اضافہ ہونے کے ساتھ ہی ان گنت لاکھوں افراد کی زندگیاں خطرے میں ہیں۔

خاص طور پر ریاستہائے متحدہ میں صورتحال انتہائی سنگین ہے۔ دنیا کے کسی بھی دوسرے ملک کے مقابلے میں اب ہر ریاست اور علاقے میں 20 لاکھ سے زیادہ کیسز اور 112،000 افراد ہلاک ہوئے ہیں۔ ہر دن دسیوں ہزار افراد نئے متاثر ہوتے ہیں اور کئی سیکڑوں افراد ہلاک ہوجاتے ہیں ، حالانکہ امریکہ اور دیگر ممالک میں سرکاری اعداد و شمار حقیقت کو بڑی حد تک اہمیت نہیں دیتے ہیں۔

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے ڈائریکٹر جنرل ٹیڈروس اذانوم گریبیسس گذشتہ روز یہ کہا تھا کہ ہر روز نئے کیسوں میں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے. انہوں نے کہا ہے کہ چھ ماہ اس وبا کو پھیلے ہو چکے ہیں اور اب یہ وقت نہیں کہ کوئی ملک بھی احتیاطی تدابیر کو ترک کر دے. تاہم، انہوں نے یہ بھی تسلیم کیا ہے کہ اب ایسا کوئی بھی مشورہ بے اثر دکھائی دے رہا ہے.

دنیا بھر کی حکومتوں نے سرمایہ داروں کو یقین دلایا ہے کہ ان کے مفادات کا ہر حال میں تحفظ کیا جائے گا. پوری دنیا میں بشمول امریکہ یہ دیکھا جا رہا ہے کہ ایسی فیکٹریاں جو اس وبا کے دنوں میں بھی کام کر رہی ہیں وہاں کسی طرح کا بھی سماجی فاصلہ برقرار نہیں رکھا جا رہا اور نہ ہی وہاں کام کرنے والے کارکن ماسک کا استعمال کر رہے ہیں.
کرونا وائرس دنیا میں رائج سرحدوں کی پروا نہیں کرتا اور عالمی سطح پر اس کا پھیلاؤ ہر ملک کے لیے تباہ کن ہو گا.
یورپ میں تقریبا 2. 2.1 ملین انفیکشن اور 179،000 سے زیادہ اموات کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ اگرچہ اسپین ، اٹلی ، جرمنی اور فرانس جیسے ابتدائی مرکزوں میں یہ وائرس کسی حد تک دب گیا ہے ، برطانیہ اور مشرقی یورپ میں انفیکشن اور اموات میں اضافہ جاری ہے۔ روس میں اب 476،000 واقعات اور 5،900 معلوم اموات ہیں اور اس ملک میں دنیا میں نئے کیسز اور نئی اموات کی شرح سب سے زیادہ ہے۔

وبائی مرض کے دیگر مرکزات جنوبی ایشیاء اور جنوبی امریکہ ہیں۔ بھارت میں اب ایک دن میں کم از کم 10،000 نئے کیسز ہیں اور 250 اموات ، جو تعداد اوپر کی طرف چل رہی ہے۔ ملک میں اس وقت 265،000 واقعات اور 7،400 اموات ریکارڈ کی گئیں ہیں۔

حکمران طبقے کی پالیسی کا مقابلہ مزدور طبقے کی منظم مزاحمت کے ذریعے کیا جانا چاہئے۔ 21 مئی کے اپنے بیان میں ، سوشلسٹ ایکویلیٹی پارٹی نے کہا ، “اگر انفیکشن ، بیماری اور موت سے بچنا ہے تو ، کام کی جگہ کی ایک نئی شکل تیار کرنے کی ضرورت ہے جو کام کرنے کی محفوظ شرائط کی نگرانی کرے اور ان کو نافذ کرے۔
لہذا ، ایس ای پی کارکنوں کو مشورہ دیتا ہے کہ وہ ہر فیکٹری ، دفتر اور کام کی جگہ پر رینک اور فائل سیفٹی کمیٹیاں تشکیل دے۔ ان کمیٹیوں کو ، جو جمہوری طور پر خود کارکنوں کے زیر کنٹرول ہیں ، ان اقدامات ، تشکیل اور ان کی نگرانی کریں جو کارکنوں ، ان کے اہل خانہ اور وسیع تر معاشرے کی صحت اور زندگی کی حفاظت کے لئے ضروری ہیں۔
اب وقت آ گیا ہے کہ سرمایہ داروں اور حکمرانوں کو واضح طور پر بتا دیا جائے کہ “مزددوروں کی زندگی کی اہمیت ہے” اور آنے والے دنوں میں مزدوروں کو مل کرجدہوجہد کرنا ہوگی تا کہ وہ اپنے حقوق کا تحفظ کر سکیں.

User Rating: Be the first one !

About Daily Pakistan

Check Also

حکومت پاکستان دسمبر 2022تک پاکستان میں فائیو جی ٹیکنالوجی متعارف کرانے کے لئے کوشاں ہے، امین الحق

اسلام آباد۔ 23نومبر (ڈیلی پاکستان آن لائن ) :وفاقی وزیر برائے آئی ٹی و ٹیلی …

Skip to toolbar