Breaking News
Home / پاکستان / شہبازشریف کی بجٹ میں بنیادی اور عوامی ریلیف کے شعبہ جات نظرانداز کرنے پرکڑی تنقید

شہبازشریف کی بجٹ میں بنیادی اور عوامی ریلیف کے شعبہ جات نظرانداز کرنے پرکڑی تنقید

Shahbaz Sharif, brother of ousted Pakistani prime minister Nawaz Sharif, and head of the Pakistan Muslim League-Nawaz (PML-N), addresses a press conference after his brother's sentencing, in Lahore on July 6, 2018. Pakistan's former prime minister Nawaz Sharif was sentenced in absentia to 10 years in prison by a corruption court in Islamabad on July 6, lawyers said, dealing a serious blow to his party's troubled campaign ahead of July 25 elections. / AFP PHOTO / ARIF ALI

شہبازشریف کی بجٹ میں بنیادی اور عوامی ریلیف کے شعبہ جات نظرانداز کرنے پرکڑی تنقید

بجٹ میں غریب اور محنت کش طبقات کے لئے کچھ بھی نہیں ،پی ایس ڈی پی اور ترقی اخراجات کہاں ہیں جن سے روزگارملے اور ملک میں ترقی ہو ؟،

آئندہ سال اور بھی سخت اور مشکل ہوگا، اپوزیشن لیڈر کا بیان

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر اور قائد حزب اختلاف شہبازشریف نے بجٹ میں بنیادی اور عوامی ریلیف کے شعبہ جات نظرانداز کرنے پرکڑی تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ بجٹ میں غریب اور محنت کش طبقات کے لئے کچھ بھی نہیں ،پی ایس ڈی پی اور ترقی اخراجات کہاں ہیں جن سے روزگارملے اور ملک میں ترقی ہو ؟،آئندہ سال اور بھی سخت اور مشکل ہوگا۔

ایک بیان میں اپوزیشن لیڈر نے کہاکہ پی ایس ڈی پی کی رقم میں اضافہ اورتخلیقی پروگرام درکارتھے تاکہ لوگوں کو روزگار ملتا، غربت میں کمی آتی ۔انہوں نے کہا کہ سرکاری شعبہ کے ترقیاتی پروگرام (پی ایس ڈی پی) میں 701 ارب سے مزید کمی کرکے 650 کردیا گیا ۔ انہوں نے کہاکہ بجٹ میں سماجی تحفظ کی رقم 245 سے مزید کم کرکے 230 ارب کردی گئی ہے،کورونا وبا کی صورتحال درپیش ہے جبکہ حکومت نے سماجی تحفظ کی رقم میں کٹوتی کردی ہے ۔

انہوں نے کہاکہ حکومت 1050 ارب یا 27 فیصد رقم ٹیکس کے ذریعے جمع کرنے کا دعوی کررہی ہے، یہ کیسے ہوگا؟ یہ نہیں بتارہی ،قوم کو ابھی سے خبردار کررہا ہوں کہ حکومت منی بجٹ لائے گی ،قوم کو خبردار کررہا ہوں کہ حکومت چوردروازے سے مزید ٹیکس لگائے گی ۔ انہوںنے کہاکہ کورونا کی آمد سے پہہلے ہی گزشتہ برس زرعی پیداوار میں 2.9 فیصد کمی ہوچکی تھی ،6.9 فیصد کپاس کی پیداوار میں کمی کا مطلب ہے کہ ٹیکسٹائل برآمدات میں بھی کمی ہوگی ۔

انہوں نے کہاکہ لارج سکیل مینوفیکچرنگ میں 7.8فیصد کی بڑی کمی ہوچکی ہے جس کی بحالی کے لئے بجٹ میں کوئی اعلان نہیں کیاگیا ،لارج سکیل مینوفیکچرنگ کی بحالی کے لئے ٹیکس اور ڈیوٹیز میں کمی اور رعایت کی ضرورت ہے۔

User Rating: Be the first one !

About Daily Pakistan

Check Also

حکومت پاکستان دسمبر 2022تک پاکستان میں فائیو جی ٹیکنالوجی متعارف کرانے کے لئے کوشاں ہے، امین الحق

اسلام آباد۔ 23نومبر (ڈیلی پاکستان آن لائن ) :وفاقی وزیر برائے آئی ٹی و ٹیلی …

Skip to toolbar